• The Facebook Platform

Results 1 to 3 of 3
  1. #1
    Join Date
    Jul 2011
    Posts
    13
    Points
    14.70
    Rep Power
    20

    Default انسان کون نہیں؟?

    کبھی کبھی مجھے اپنے گرد نواح میں ایسی چیزیں دیکھنے کو ملتی ہیں۔جن پر غور کرنے کے بعد مجھے ایک سوال شدت سے پوچھنے کو دل کرتاہے۔
    وہ سوال ہے کیا اس پر بعد میں بات کرتی ہوں۔
    پہلے آپ لوگ یہ دیکھیئے
    لنک







    میں یہ کیس کافی دنوں سے دیکھ اور سُن رہی تھی مگر یہ مکمل ویڈیو میری نظر سے نہ گُزری تھی۔
    اب جو گُزری ہے تو دل بے حد بُرا ہوا پڑا ہے۔
    کہتے ہیں کوئی کسی کا سگا نہیں ہو سکتا تب تک جب تک وہ انسان خود اپنا سگا نہ ہو۔
    آپ کی جوتی کا کیل آپ کو ہی محسوس ہوتا ہے
    آپ ہی کے پاؤں میں چھبتا ہے۔آپ ہی کے پاؤں کو زخمی کرتا ہے تو یہ کیل آپ کو نکالنا بھی خود ہی ہو گا
    کوئی اس کا کچھ نہیں کر سکتا۔
    مگر ناجانے ہم لوگوں کے دل اور دماغ کی کیا ٹیونگ کر دی گئی ہے؟
    ہمارے اپنوں کی بے بسی،اُن کی تنگ دستی،تنگ حالی،اُن کے لاشیں اب پریشان نہیں کرتی۔
    کیوں ہم میں وہ چیز ختم ہوتی جا رہی ہے جسے احساس کہتے ہیں؟
    نہیں بلکہ احساس کہتے تھے۔ہم تب تک نہیں بولتے جب تک ہم پر بھی وہ ظلم کی بارش نہ ہو جائے جو کبھی ماضی میں یا چند دن پہلے ہمارے کسی اپنے محلے دار یا بہن بھائی پر ہو چُکا ہے۔
    یا ہم لوگوں نے سمجھ لیا ہے کہ پیسے سے سب کچھ ممکن ہے تو جناب دھڑا دھڑ پیسے کماؤ اور زندگی بہتر بناؤ۔
    پھر پیسے کمانے کے شارٹ کٹ سٹارٹ ہو جاتے ہیں جو مفلوج نظام کی مزید دھجیاں اُڑا دیتے ہیں۔
    لیکن کیا ہم نے کبھی یہ سوچا کہ ہم اپنا آج بہتر کرنے کے چکروں میں اپنے بچوں کو کس قدر خطرناک مستقبل کی جانب دھکیل رہے ہیں؟
    اگر یہ احساس ہوتا تو آج ہم سب وہ کبوتر نہ بنے بیٹھے ہوتے کہ مصیبت کو سامنے دیکھ کر آنکھیں بند کر لیں۔ یا کہیں کسی اور پر اپنی پریشانیوں اور ناکامیوں کی فرسٹریشن اُتار دی۔ہم لوگ تو یا تو بلکل دائے جانب چل پڑتے ہیں تو کھبی بس بائیں جانب کا راستہ پکڑ کر نہ سہی دیکھتے ہیں نہ غلط بس چل پڑتے ہیں۔انتہاء پسندی مانو ہم لوگوں میں دن با دن سراعیت کرتی جا رہی ہے۔یہ وہی انتہاء پسندی ہے جو کبھی سُلمان تاثیر کو مارنے میں بڑی اچھی لگتی ہے تو کبھی کراچی میں پکڑجانے والے ڈاکووں کو زندہ جلانے میں تسکین دیتی ہے۔
    اور پھر یہی انتہاء پسند کبھی سیالکوٹ کے دو بھائیوں کو رمضان کے بابرکت مہینے میں جارہانہ قتل کرواتی ہے تو کبھی ایسے ہی کسی غریب ماں باپ کے چشم و چراغ کو سڑک پر گولیاں مار کر زندگی کی بھیک مانگتے ہوئے مار ڈالتی ہے۔
    میں پوچھتی ہوں کیا اسلام اسی کا نام ہے۔جس کی لاٹھی اُس کی بھینس کا قانوں تو ہمارے پیارے نبی ﷺ نے منسوب کروا کر امن کا دور دورہ کیا تھا۔تلوار کی نوک پر سلمان تاثیر کو غلط ثابت کر کے کس کے نام پر دھبہ لگایا؟اسلام کے؟
    دو بھائیوں کو ڈاکو کہہ کر موت کے گھاٹ ایسے اُتارا کہ شیطان بھی پناہ مانگے۔اُن کو قتل کروا کر اپنے پیارے پرچم پر کالک پوت دی۔
    اگر آج سکرین کے اس طرف بیٹھ کر ہم یہ سب صرف خبروں کی حد تک دیکھ رہے ہیں تو اس میں ہمارا کوئی کمال نہیں۔
    یہ اللہ کی مرضی ہے ورنہ ہم میں سے بھی کوئی ان کہ جگہ ہو سکتا تھا
    اور بہت حدتک ممکن ہے کہ آج نہیں تو کل ہم بھی سکرین کے اُس طرف پہنچ کر دوسرے لوگوں کے لئے ایسے ہی کسی خوفناک خبر کا ایک کردار بن جائیں۔سرفراز کی جگہ میں بھی ہو سکتی تھی۔آپ بھی یا ہمارا کوئی عزیز بھی۔
    تو اگر آج دنیا میں تم لوگوں کو دہشت گرد کہا جاتا ہے تو اس پر اتنے غُصے کا اظہار کیوں؟
    اگر تم کہتے ہو کہ تم لوگوں نے دہشت گردی کے کام نہیں کئے تو امن پسند ہونے والے کونسے جھنڈے گاڑھے ہیں؟
    اگر اس تحریر کے بعد کسی نے یہ بہانے یہاں لگانے ہیں کہ حکومت ہی کرپٹ ہے تو وہ حکومت لائی کون؟
    کس نے ووٹ دیا؟آج ہی ہوئے ہیں نا لیاری پر دستی بمبوں سے حملے۔یہ وہی لیاری کے لوگ ہیں جو لیکن پروگرام کی ریکاڈنگ میں کہتے ہیں کہ پیپلز پارٹی کی طرف سے کوئی گدھا بھی کھڑا ہو جائے گا تو ہم اُس ہی کو ووٹ دیں گے۔
    آزمائے ہوئے ہوئے کو کیا آزمانا۔جب ہم خود اس قدر بیکار قوم ہیں کہ اپنے ہاتھ کی سب سے بڑی طاقت کو استعمال کرنے کا گُر نہ جان پائے تو پھر ہمارا واپس زمین بوس ہو جانا ہی بہتر ہے
    میں پوچھتی ہوں کون انسان نہیں؟
    ہم جو اپنا ہر بار قیمتی ووٹ پانچ سو روپے کے عوض بیچ ڈالتے ہیں؟
    کون انسان نہیں؟
    وہ دو معصوم لڑکے جنہوں نے اپبھی بچپنا پورا دیکھا بھی نہ تھا؟
    کون انسان نہیں؟
    یہ سرفراز جو تپتی سڑک پر نیہتا مار دیا گیا؟
    کون انسان نہیں؟
    ہم یا ہمارے آنے والے کل میں وہ معصوم بچے جو ہم سے انسانیت کے سادے تقاضے پورے بھی نہ کئے جانے پر سوال کرینگے؟
    کون انسان نہیں؟

    نہ کرؤ یہ محنت
    نہ پیسے کماؤ۔کیونکہ کل یا تو کرپٹ لوگ تم سے کسی نہ کسی بہانے لے لیں گے نہیں تو چور ڈاکو بھی امیر ہونے کے لئے تمھارے گردن پر پستول کی نوک سے کام لے سکتے ہیں۔
    تب تم بھی پوچھو گے
    انسان کون نہیں؟

    خُدا نے اُس قوم کی حالت نہیں بدلی
    نہ ہو جس کو خیال خود اپنی حالت کے بدلنے کا




  2. #2
    Join Date
    Jul 2011
    Location
    SKY
    Posts
    2
    Points
    2.00
    Rep Power
    0

    Default

    main khud hairaan hun k ye log aisa kyun kertay hain.aur ye jitne bi rangers walay mulavis hain in sub ko isi jaga per kharay ker k golian mari jaani chaahiyen aur inko b isi tarah tarapta hua chorna chaahiye ta k aainda aisa koi waqia namudaar na ho agr in logon ko aaj chor dia gya to kal ko aisay saare mulk main lakhon waqiat hon ge.inko sakht se sakht saza milni chaahiye....

  3. #3
    Join Date
    Jun 2011
    Location
    اللہ کی زمین
    Age
    28
    Posts
    383
    Points
    521.88
    Rep Power
    920

    Default

    السلامُ علیکم
    اچھی اورفکر انگیزشیئرنگ ہے۔
    اِنسان کون نہیں؟
    اگر یہی سوال خود سے بھی پوچھیں تو ہمیں جواب مل جائے گا،
    شیئرنگ کا شُکریہ۔ جیتی رہیں
    Signature - انسان کون نہیں؟?
    idf69z - انسان کون نہیں؟?


 

Thread Information

Users Browsing this Thread

There are currently 1 users browsing this thread. (0 members and 1 guests)

     

Tags for this Thread

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •